عدلیہ گندی اور انتشاری سیاست کا حصہ مت بنے، مریم نواز thumbnail

عدلیہ گندی اور انتشاری سیاست کا حصہ مت بنے، مریم نواز

مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز نے مری میں تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ عدلیہ گندی اور انتشاری سیاست کا حصہ مت بنے۔

مری میں تقریب سے خطاب کرتے ہوئے مریم نواز کا کہنا تھا کہ ہمارا ملک آج ہم سب کو آواز دے رہا ہے، اس ملک کو کئی کاری ضربیں لگیں، جب ہم حکومت سے باہر تھے تو ہم دیکھ رہے تھے کہ غریب کے پاس روٹی نہیں ہے، قسم کھاکر کہتی ہوں پاکستان کی معیشت وینٹی لیٹر پر ہے اور بات میں کوئی شک نہیں، عمراان خان کی حکومت میں اسٹیٹ بینک کو آئی ایم ایف کے پااس گروی رکھ دیا اور یہ قانون بنا گیا کہ اسٹیٹ بینک جو کچھ کرے گا کوئی حکومت اسکو کچھ نہیں کہہ سکتی۔

رہنما ن لیگ کا کہنا تھاکہ وہ ممالک جو پاکستان کے دوستوں کی صف میں ہوتے تھے آج وہ ہمارے دشمنوں کی صف میں ہیں اور وہ پاکستان سے ناراض تھے، یہ پاکستان کیلئے بارودی سرنگیں بچھاکر گیا ہے۔ چینی وفد نے شکایت کی کہ ہم عمران خان کی حکومت سے بہت مایوس تھے، شہباز شریف ترکی اس لیے جارہے ہیں جو ترکی نے ہمرے دور میں سرمایہ کاری کی تھی پاکستان میں اسکو بری طرح کچلا گیا، حالانکہ وہ پاکستان کی مدد کررہے تھے۔

مریم نواز نے کہا کہ محمود خان نے کہا صوبے میں فورس استعمال کروں گا۔ محمود خان کا بیان صوبوں کو لڑانے کی گھناؤنی سازش ہے۔

انہوں نے کہا کہ کے پی کے لوگوں نے اسکے مارچ کو مسترد کردیا، آج جو لوڈ شیڈنگ ہورہی ہے پاکستان کے پاس پیسے نہیں ہیں اسکو ختم کرنے کیلئے، انہوں نے وقت پر تیل نہیں منگوایا، ملک کا خزانہ خالی پڑا ہے۔نوازشریف لوڈشیڈنگ کو زیرو پر لیکر آیا۔

عمران خان کے اقتدار کی ہوس میں اس ملک کے بیٹے شہید ہوئے۔ اداروں سے پوچھتی ہوں کیا ایسے دہشت گرد کو کھلی چھٹی ملے گی؟۔ اس نے زرداری صاحب کے پاوں پکڑے یہ ہے اسکی حقیقت، اگر عمران خان نے فساد کرنا ہے تو پاکستان ردالفساد کیلئے تیار ہے۔ پاکستان کا نقصان کرنے کیلئے یہ تلا بیٹھا ہے، آج یہ انسان ایک سیکنڈ اپنی کارکردگی پر نہیں بول سکتا، کیا فرق ہے عمران خان میں اور دہشتگرد میں، یہ زیادہ خطرناک ہیں کیونکہ انہوں نے سیاسی لبادہ اوڑھا ہوا ہے۔

مریم نواز نے کہا کہ تم حکومت حاصل کر بھی لو تو تم نے وہی کرنا ہے جو پچھلے چار سال کیا، عوام کے مسائل سے بے خبر رہے، عمران خان نے اپنے مارچ کیلئے سرکاری وسائل استعمال کئے۔ ہیلی کاپٹر خیبر پختونخوا حکومت کا تھا فرح گوگی کا نہیں تھا۔

عمران خان پورے پاکستان میں آگ لگانے پر تلا ہے۔ اسکی پوری زندگی محسن کشی سے بھری ہے۔ اسٹیبلشمنٹ جو اسکے محسن تھے انکو میر جعفر اور میر صادق کہا، پھر جب وہاں ناکام ہوئے تو عدلیہ کی طرف گئے، کل سپریم کورٹ کو حکم دے رہا ہے کہ مجھے ہر طرف سے ناں ہوگئی اب عدلیہ بچتی ہے جو میری مدد کرے۔ عدلیہ گندی اور انتشاری سیاست کا حصہ مت بنے۔ یہ عدلیہ کے ججز میں ثاقب نثار ڈھونڈ رہا ہے، یہ اسٹیبلشمنٹ میں وہ نمبر ڈھونڈ رہا جو اب بند ہوگیا ہے۔

عدلیہ کو اپنی گندی سیاست سے دور رہنے دو۔ جب تک عمرن کان کی جلاؤ گھیراؤ کی سیاست کو نہیں روکا جاتا پاکستان ایک انچ آگے نہیں بڑھ سکتا۔ کسی نے جنگوں میں بھی درختوں کو آگ نہیں لگائی، جب اسلام آباد میں درخت جلائے گئے تو میرا دل جلا تھا۔

مریم نواز نے کہا کہ کہتے ہیں راستے بند تھے ورنہ ہم نے انقلاب لانا تھا، انقلاب راستے کھلنے سے نہیں آتا بلکہ بند راستوں کو کھول کر اپنا راستہ خود بنانے سے آتا ہے، اب یہ کہیں گے ہیں ہم نے تو انقلاب لانا تھا لیکن سامنے رانا تھا۔ رانا ثنا اللہ آج پورے پاکستان کا ہیرو ہے، یہ وہی رانا ثنا اللہ تھا جس کو تم نے جھوٹے مقدمے میں جیل میں ڈالا اور آج اللہ کا فیصلہ آیا تو وہی رانا ثنا اللہ پاکستان کیلئے ڈٹ کر کھڑا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.