انصاف نہ ملنے پر پاکستانی خاتون کی عدالت سے بھارت بھجوانے کی استدعا thumbnail

انصاف نہ ملنے پر پاکستانی خاتون کی عدالت سے بھارت بھجوانے کی استدعا

لاہورہائیکورٹ میں 35 سال سے اراضی کیس کا فیصلہ نہ ہونے پر خاتون نے بھارت بھجوانے کا مطالبہ کردیا۔

چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ جسٹس محمد امیر بھٹی نے سیدہ شہناز کی درخواست پر سماعت کی۔

عدالت میں خاتون سیدہ شہباز نے موقف اختیار کیا کہ 35 سال سے اراضی کے کیس کا فیصلہ نہیں ہوسکا ہے،عدالت سے استدعا ہے کہ مجھے فوری بھارت بھجوادیا جائے۔

انھوں نے بتایا کہ 9 سال کی تھی جب یہ کیس لڑانا شروع کیا اور آج 45 سال کی ہوچکی ہوں لیکن آج تک انصاف نہیں ملا۔

ان کا کہنا تھا کہ بااثرافراد میری 5 مرلہ زمین پر قابض ہیں اورشیخوپورہ میں کرائے کے مکان میں رہتی ہوں۔

انھوں نے یہ بھی موقف دیا کہ اگر لاہورہائی کورٹ بہاولپوربنچ میں زمین کے کیس کے لیے گئی تو جان سے ماردیا جائے گا۔

چیف جسٹس لاہورہائی کورٹ نے ریمارکس دئیے کہ آپ کو بھارت بھجوانے کا اختیار میرے پاس نہیں اور میں کسی ادارے کو بھارت کا ویزہ جاری کرنے کا حکم نہیں دے سکتا۔

متاثرہ خاتون نے مزید استدعا کی کہ لاہور ہائی کورٹ بہاولپور بنچ سے 5 مرلے اراضی کے کیس پرنسپل سیٹ لاہور ہائیکورٹ پرمنتقل کردیا جائے۔

عدالت نے کیس منتقلی کی درخواست پر فریقین سے جواب طلب کرلیا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.