سرمایہ کار ملکی وعالمی صورتحال کے باعث تذبذب کاشکار thumbnail

سرمایہ کار ملکی وعالمی صورتحال کے باعث تذبذب کاشکار

روس یوکرین تنازع کے تناظر میں پاکستان اسٹاک ایکسچینج میں اتار چڑھاؤ کا سلسلہ جاری ہے، حکومت کی جانب سے ریلیف کی خبروں کے بھی اثرات نظر آرہے ہیں، کے ایس ای 100 انڈیکس میں 476 پوائنٹس کا اضافہ ہوگیا۔

پاکستان اسٹاک ایکس چینج میں کاروباری ہفتے کے آغاز پر پیر کو ملکی وعالمی سطح پر جاری کشمکش کے باعث سرمایہ کار تذبذب کا شکار نظر آئے، جس کے نتیجے میں ابتدائی اوقات میں حصص فروخت کا دباؤ دیکھنے میں آیا اور کے ایس ای 100 انڈیکس مندی کے سبب 43 ہزار 639 پوائنٹس کی نچلی سطح پر آگیا تاہم بعد ازاں بڑے پیمانے پر شیئرز خریداری شروع ہوگئی جس سے مندی کے اثرات زائل ہوگئے اور انڈیکس میں تیزی کے رجحان کے سبب 44 ہزار 557 پوائنٹس کی بلند سطح پر پہنچ گیا، کاروبار کے اختتام پر انڈیکس میں 476.77 پوائنٹس کا اضافہ ریکارڈ کیا گیا۔

پی ایس ایکس میں پیر کو مجموعی طور پر 340 کمپنیوں کے شیئرز کی لین دین ہوئی جن میں 226 کمپنیوں کے شیئرز کی قیمتوں میں اضافہ ہوا اور 96 میں کمی جبکہ 18 کمپنیوں کے شیئرز کی قیمتیں مستحکم رہیں۔

اعداد و شمار کے مطابق بیشتر کمپنیوں کے شیئرز کی قیمتیں بڑھنے کے نتیجے میں مارکیٹ کی سرمایہ کاری مالیت 75 ارب 57 کروڑ 3 لاکھ روپے بڑھ گئی تاہم حصص کی لین دین کے لحاظ سے کاروباری حجم گزشتہ ٹریڈنگ سیشن کی نسبت 13.87 فیصد کم رہا۔

اسٹاک ماہرین کے مطابق روس اور یوکرین جنگ کے معاشی اثرات خاص طور پر تیل اور گیس مہنگا ہونے کے خدشات پائے جارہے ہیں، جس کی وجہ سے سرمایہ کار محتاط طرز عمل اپنا رہے ہیں، پیر کو ملک میں مہنگائی اور تجارتی وکرنٹ اکاؤنٹ خسارہ بڑھنے کے اندیشوں کے باعث ابتدائی اوقات میں شیئرز فروخت کرنے کا رجحان رہا لیکن بعد میں مندی کی وجہ سے گری ہوئی قیمتوں کو دیکھتے ہوئے خریداری شروع ہوئی، جس کی وجہ سے ریکوری آئی۔

ماہرین کا خیال ہے کہ ملک میں حکومت مخالف سرگرمیوں کی وجہ سے بھی سرمایہ کار غیر یقینی صورتحال سے دوچار ہیں اور آئندہ دنوں بھی سرمایہ کار روس اور یوکرین تنازع کے ساتھ ساتھ ملک میں سیاسی کشمکش کی وجہ سے سرمایہ کاری کی حکمت عملی وضع کریں گے۔

واضح رہے کہ روس کے یوکرین حملے کے بعد 24 فروری کو اسٹاک مارکیٹ میں 1300 سے زائد پوائنٹس کی کمی ریکارڈ کی گئی تھی، جس میں 25 فروری کو ڈیڑھ سو پوائنٹس کی ریکوری ہوئی اور 28 فروری کو بھی 476.77 پوائنٹس بڑھ گئے، لیکن اس کے باجود اب تک 24 فروری کی غیر معمولی مندی پوری طرح ریکور نہیں ہوسکی ہے۔

عارف حبیب سیکیورٹیز کے مطابق فروری کے مہینے میں اسٹاک مارکیٹ کی کارکردگی منفی 2 فیصد رہی، اس دوران کے ایس ای 100 انڈیکس میں 914 پوائنٹس کی کمی ریکارڈ کی گئی، اگرچہ ایک ارب ڈالر کے سکوک عالمی مارکیٹ میں لائے گئے اور آئی ایم ایف کی جانب سے بھی ایک ارب ڈالر کی قسط موصول ہوئی لیکن اس کے باوجودعالمی مارکیٹ میں تیل کی بلند قیمتوں اور روس یوکرین کشیدگی کے باعث منفی رجحان غالب رہا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.