بھارتی آئین میں کشمیر کالفظ بھی برداشت نہیں، صدر پاکستان thumbnail

بھارتی آئین میں کشمیر کالفظ بھی برداشت نہیں، صدر پاکستان

Arif Alvi Speech Kashmir Day Isb 05-02

صدرِ پاکستان ڈاکٹر عارف علوی نے کہا ہے کہ بھارتی آئین میں کشمیر کا لفظ بھی ہمیں برداشت نہیں جبکہ ہم کشمیر کا نام بھی بھارت کے آئین میں نہیں دیکھنا چاہتے۔

اسلام آباد میں یوم یکجہتی کشمیر کے حوالے سے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے کہا کہ کشمیری عوام کو خراج تحسین پیش کرتا ہوں جن پر 70سال سے ظلم کیا جا رہا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ کشمیر میں اس وقت 9لاکھ بھارتی فوج موجود ہے۔

صدر مملکت نے کہا کہ بھارت نے جنیوا کنونشن اور اقوام متحدہ کے منشور کی خلاف ورزی کی، بھارت نے کشمیریوں کے ساتھ دھوکا کیا۔

ڈاکٹر عارف علوی نے مطالبہ کیا کہ کشمیر پاکستان کا حصہ ہے اس لیے عالمی برادری کشمیر کے معاملے کو دیکھے اور اپنا کردار ادا کرے۔

صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے کہا کہ ہم کشمیریوں کے ساتھ کھڑے تھے، کھڑے ہیں اور کھڑے رہیں گے جبکہ پاکستان ہاتھ ہر ہاتھ دھرے نہیں بیٹھا رہے گا۔

واضح رہے کہ دنیا بھر میں پاکستانی اور کشمیری آج یوم یکجہتی کشمیر منا رہے ہیں، جس کا مقصد مقبوضہ کشمیر پر بھارت کے غیرقانونی قبضے کیخلاف کشمیریوں کی جہد مسلسل کو خراج تحسین پیش کرنا اور عالمی برداری کو کشمیریوں کا حق خود اردیت دلانے کا وعدہ یاد دلانا ہے۔

بھارت نے 80 لاکھ افراد کی آبادی کو دنيا کی سب سے بڑی جيل ميں تبديل کر رکھا ہے، 5 اگست 2019 کے بعد سے بھارتی مظالم ميں اضافہ ہوا ہے۔

یوم یکجہتی کشمیر کے حوالے سے اسلام آباد میں ریلی نکالی گئی جبکہ آزاد کشمیر کوہالہ پل پر انسانی ہاتھوں کی سب سے بڑی زنجیر بنائی گئی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.